موجودہ حکومت نے ن لیگ حکومت کے آخری 2 سال کے مقابلے میں 48فیصد کم بیرونی قرضےحاصل کیے

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک)وفاقی مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ نے کہا ہے کہ حکومت نے پہلی 9 سہ ماہی میں 48 فیصد کم بیرونی قرضے لیے ہیں، یہ قرضے ن لیگ حکومت کی آخری سہ ماہی سے کم ہیں، حکومت نے 9 سہ ماہی میں 78 فیصد زیادہ بیرونی قرضے ادا بھی کیے ہیں۔ انہوں نے ٹویٹر پر اپنے ٹویٹ میں معاشی اعشاریوں کے بارے میں بتایا کہ تحریک انصاف کی حکومت نے پہلی 9 سہ ماہی میں 48 فیصد کم بیرونی قرضے لیے ہیں۔ن لیگ حکومت کی آخری 9 سہ ماہی کے مقابلے میں کم قرضے لیے گئے۔ حکومت نے 9 سہ ماہی میں 78 فیصد زیادہ بیرونی قرضے ادا کیے ہیں۔

مشیر خزانہ حفیظ شیخ نے کہا کہ کورونا کے چیلنجز کے باوجود پاکستان کا صنعتی شعبہ پھل پھول رہا ہے۔ لارج اسکیل مینو فیکچرنگ ، ٹیکسٹائل پیداوار اور آٹو سیلز بڑھ رہی ہیں۔فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کے سابق چیئرمین شبر زیدی نے ارب پتی ارکان پارلیمنٹ کی کرپشن کو ریاستی سرپرستی میں بدعنوانی قرار دے دیا۔انہوں نے اپنے کھلے خط میں بطور چیئرمین ایف بی آر ناکامی کا اعتراف کیا اور کہا کہ وہ چیئرمین ایف بی آر کی حیثیت سے بری طرح ناکام رہے۔ان کا کہنا تھا کہ تمام کرپشن اندرونی طورپر کی جارہی ہے اور اثاثوں کے گوشوارے اسے جانچنے کا ایک ذریعہ ہے، ارب پتی ارکان پارلیمنٹ جانتے ہیں کہ کس طرح ٹیکسوں کی پلاننگ کرنی ہے اور یہی ریاست کی سرپرستی میں کرپشن ہے۔شبرزیدی نے کہا کہ اس کا الزام کسی کو نہیں دیاجاسکتا، انہیں ایک موقع ملا لیکن وہ ناکام رہے، اللہ تعالیٰ کو جواب دہ ہیں، اس نظام میں بہتری کےلیے ضروری ہے کہ زیادہ سے زیادہ معلومات سامنے لائی جائیں۔ ان کا کہنا تھا کہ معاشرہ ان چیزوں کو بہتر طور پر جانتا ہو تو اپنے مفادات کے لیے بے رحمانہ طریقے سے نمٹتا ہے اور پاکستان موجودہ حالات میں کبھی بہتر نہیں ہوسکتا۔خیال رہے کہ شبر زیدی 10 مئی 2019 سے 8 اپریل 2020 تک چیئرمین ایف بی آر رہے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں