لاہور میں مسلح افراد میٹرک کی طالبہ کو بھائی کے سامنے اغوا کر کے لے گئے،سی سی ٹی وی فوٹیج بھی آ گئی

لاہور(نیوز ڈیسک) لاہور میں مسلح افراد میٹرک کی طالبہ کو اغوا کر کے لے گئے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق 17 سالہ طالبہ اپنے بھائی کے ساتھ امتحان دینے کے بعد واپس جا رہی تھی کہ چار مسلح افراد کار میں لڑکی کو اغوا کر کے لے گئے۔طلبہ کے اغوا کی سی سی ٹی وی فوٹیج بھی سامنے آئی ہے جس میں دیکھا جا سکتا ہے کہ سفید رنگ کی کار نے موٹر سائیکل سوار کو روکا بعدازاں موٹر سائیکل پر سوار لڑکی کو زبردستی اتار کر گاڑی میں بٹھا کر لے گئے۔اس دوران اغوا کار موٹر سائیکل سوار کی جانب سے کی جانے والی مزاحمت پر اس کو تھپڑ رسید کرتا ہے اور جانے کا اشارہ کرتا ہے۔

ملزمان لڑکی کو اغوا کرنے کے بعد باآسانی فرار ہو جاتے ہیں۔پولیس کی جانب سے طالبہ کے واقعے کا مقدمہ درج کر لیا گیا ہے اور لڑکی کی تلاش میں شروع کردی گئی ہے۔شادباغ کی رہائشی دسویں جماعت کی طالبہ ہے۔ دوسری جانب بہاولنگر اغوا کے بعد نامعلوم ملزمان کے تشدد کا نشانہ بننے والی شادی شدہ خاتون ہسپتال میں دم توڑ گئی مقتولہ کی شناخت شبانہ زوجہ بہادر علی کے نام سے ہوئی ہے جو بونگا ماچھی چوک کی رہائشی اور بہاولنگر کے علاقہ حسین آباد میں مقیم تھی جسے پراسرار طور پر اغوا کرتے ہوئے نامعلوم ملزمان نے بہیمانہ تشدد کا نشانہ بنایا، حالت غیر ہونے پر خاتون کو منچن آباد روڑ اڈا لوہارکا کے قریب پھینک کر فرار ہوگئی،ریسکیو ٹیم نے موقع پر پہنچ کر تشدد زدہ خاتون کو مقامی ہسپتال منتقل کیا،شبانہ بی بی زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گئی، پولیس نے مقتولہ کی نعش قبضہ میں لیتے ہوئے تفتیش کا آغاز کردیا، مقتولہ تین بچوں کی ماں تھی جس کا خاوند بہادر علی سیکیورٹی گارڈ ہے جو کہ بہاولپور نوکری کرتا ہے، پولیس ترجمان سب انسپکٹر شہزاد اشفاق کا کہنا ہے کہ پوسٹ مارٹم رپورٹ سامنے آنے اور تفتیش کے بعد ہی قتل کی وجوہات کا تعین ممکن ہوگا ڈی پی او فاروق انور نے تفتیش کے لیے سپیشل ٹیم تشکیل دے دی ہے جو نامعلوم کار سوار ملزمان کو جلد ٹریس کرکے انکی گرفتاری کو یقینی بنائے گی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں