سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کی آڈیو جعلی ثابت ہو گئی

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) سابق چیف جسٹس آف پاکستان ثاقب نثار کی آڈیو جعلی ثابت ہو گئی۔ اس حوالے سے اظہرصدیق ایڈووکیٹ نے اپنے بیان میں کہا کہ سابق چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی آڈیو کا فرانزک کروا لیا گیا ہے۔ فرانزک میں آڈیو جعلی ثابت ہوگئی ہے۔نجی ٹی وی چینل اے آر وائی کے مطابق اظہرصدیق ایڈووکیٹ نے کہا کہ سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کی آڈیو کا فرانزک پاکستان کے صحافی اور انگلینڈ کے صحافی نے پاکستان اور انگلینڈ میں کروایا گیا جس کے بعد فرانزک کمپنی نے تصدیق کی کہ یہ آڈیو جعلی ہے، جلد فرانزک رپورٹ منظر عام پر لا رہے ہیں۔سابق چیف جسٹس گلگت بلتستان رانا شمیم کے بیان حلفی کے حوالے سے اپنے بیان میں اظہر صدیق ایڈووکیٹ نے کہا کہ نوٹری پبلک نے رانا شمیم کا بیان حلفی کی تصدیق کی کہ جعلی بیان حلفی بنوایا گیا،

ایک شخص نے گورنر ہاؤس لاہور کے مالک ہونے کا دعویٰ کیا، نوٹری پبلک نے اس بیان حلفی کی بھی تصدیق کر دی۔اظہر صدیق کا کہنا تھا کہ رانا شمیم کے بیان کی تصدیق چارلی گتھری نے کی، نوٹری پبلک نے گورنر ہاؤس کی ملکیت کی بھی تصدیق کر دی ۔ان کا کہنا تھا کہ نوٹری پبلک نے انکشاف کیا کہ اس کو لندن میں حسین نواز کے دفتر لےکر جایا گیا ،حسین نواز کا ملازم وقار اسے لے کر گیا جہاں سابق چیف جسٹس گلگت بلتستان سپریم کورٹ رانا شمیم موجود تھے ، حسین نواز کے دفتر میں رانا شمیم کا بیان حلفی بنا کر تصدیق کی گئی۔ اظہرصدیق ایڈووکیٹ نے مزید کہا کہ بہت جلد فرانزک رپورٹ اور دیگر دستاویزات بھی سامنے لائے جائیں گے۔ اظہر صدیق ایڈووکیٹ نے مسلم لیگ ن کی مرکزی نائب صدر مریم نواز کو چیلنج بھی کیا اور کہا کہ مریم نواز کو چیلنج ہے کہ وہ آڈیو لے کر عدالت جائیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں