مہنگائی کیخلاف احتجاجی تحریک عمران خان کو گھر بھجوا کر ہی ختم ہوگی، پی ڈی ایم کا فیصلہ

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ پی ڈی ایم جماعتوں نے کہا ہے کہ مہنگائی کیخلاف احتجاجی تحریک عمران خان کو گھر بھجوا کر ہی ختم ہوگی، مہنگائی نے عوام کی کمر توڑ دی، عوام حکومت کو ایک لمحہ برداشت کرنے کو تیار نہیں، بجلی گیس پٹرول اور اشیاء ضروریہ کی قیمتوں میں اضافہ واپس لیا جائے، الیکشن پر ڈاکہ ڈالنے کی سازش کو ناکام بنائیں گے۔تفصیلات کے مطابق سیکرٹری جنرل پی ڈی ایم شاہد خاقان عباسی نے پی ڈی ایم جماعتوں کے ورچوئل اجلاس کے بعد جاری کردہ بیان میں کہا کہ صدر پی ڈی ایم مولانا فضل الرحمان کی صدارت میں پی ڈی ایم کا سربراہی اجلاس آج وڈیو لنک پر منعقد ہوا۔

پی ڈی ایم میں شامل تمام سیاسی جماعتوں کی قیادت اجلاس میں شریک ہوئی۔اجلاس میں ملک کی مجموعی سیاسی اور معاشی صورتحال، بدترین مہنگائی، نیب آرڈیننس، نام نہاد انتخابی اصلاحات سمیت ملک کو درپیش داخلی و خارجی امور پر تفصیلی غور کیا گیا۔اجلاس نے ملک میں بدترین مہنگائی کی شدید مذمت کرتے ہوئے بجلی، گیس، پٹرول، آٹا، گھی، چینی، دوائی اور دیگر اشیاء ضروریہ کی قیمتوں میں بد ترین اضافہ مسترد کر دیا۔ بجلی گیس پٹرول اور دیگر اشیاء ضروریہ کی قیمتوں میں اضافہ واپس لے کر عوام کو فوری ریلیف دیا جائے۔ مہنگائی کی بنیادی وجہ عمران خان حکومت کی تاریخی کرپشن ھے۔ اجلاس نے مطالبہ کیا کہ آئی ایم ایف سے طے پانے والی شرائط عوام کے سامنے لائی جائیں۔عوام کے ساتھ یک جہتی اور ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے حکومت کی عوام دشمنی کے خلاف فیصلہ کن تحریک چلانے پر اتفاق کیا گیا۔ اجلاس کا صوبائی دارالحکومتوں میں بھرپور احتجاجی ریلیوں کے انعقاد کا فیصلہ، جس کے تحت 13نومبر کو کراچی، 17 نومبر کو کوئٹہ، 20 نومبر کو پشاور میں پی ڈی ایم جماعتیں مرکزی قیادت کی سربراہی میں سڑکوں پر نکلیں گی۔ آخری ریلی لاہور میں ہوگی جس کے بعد اسلام آباد کی طرف مہنگائی کے خلاف فیصلہ کن لانگ مارچ ہوگا۔شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ اب یہ تحریک عمران خان کو گھر بھجوا کر ہی ختم ہوگی، یہ عمران خان سے نجات کی تحریک ہے۔ عوام ایک لمحہ اس حکومت کو برداشت کرنے کو تیار نہیں جس نے مہنگائی سے عوام کی کمر توڑ دی ہے۔

اجلاس نے نیب ترمیمی آرڈیننس، انتخابی اصلاحات، ای وی ایم اور انٹرنیٹ ووٹنگ کو بد نیتی قرار دیتے ھوئے مکمل طور پر مسترد کردیا۔ اجلاس غیر جمہوری نام نہاد انتخابی اصلاحات پر حکومتی اقدامات کو 2018 کے الیکشن فراڈ سے بڑا فراڈ سمجھتا ہے، یہ ملک اور عوام کے حق انتخاب کی نفی کرنے اور الیکشن چوری کرنے کی بد ترین سازش ھے۔اجلاس میں تمام جماعتوں نےعہد کیا کہ حکومتی سازش کو ناکام بنائیں گے، عوامی رائے چوری کرنے اور الیکشن پر ڈاکہ ڈالنے کی سازش کا بھرپور مقابلہ کریں گے اور اسے ناکام بنائیں گے۔ اوورسیز پاکستانیوں کو حقیقی معنی میں پارلیمان میں حق نمائندگی دیا جائے گا،

اجلاس کا عزم۔ اجلاس میں حکومتی سازش کو ناکام بنانے کے لئے پارلیمنٹ کے اندر اور باہر احتجاج کی حکمت عملی طے کر لی گئی۔پارلیمنٹ میں تمام جماعتوں سے مل کر حکمت عملی کی تیاری کی ذمہ داری قائد حزب اختلاف شہباز شریف کو سونپ دی گئی۔ اجلاس نے ڈسکہ دھاندلی رپورٹ میں قصوروار قرار پانے والوں کے خلاف فوری قانونی کارروائی کرنے کا مطالبہ کیا۔ ثابت ہوا کہ مسلط ٹولے نے ووٹ چوری کی، عملے کو اغوا کرایا، ووٹ چوروں اور اغوا کاروں کو سزائیں دی جائیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں