اسلام آباد ہائیکورٹ کا تجاوزات پر نیوی اور ائیر فورس کے خلاف کارروائی کا حکم

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) اسلام آباد ہائیکورٹ نے مارگلہ ہلز نیشنل پارک میں تجاوزات پر نیوی اور ائیر فورس کے خلاف کارروائی کا حکم دے دیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق اسلام آباد ہائیکورٹ میں مارگلہ ہلز نیشنل پارک میں بڑھتی ہوئی تجاوزات کے خلاف کیس کی سماعت ہوئی۔ دوران سماعت اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہا کہ میڈیا رپورٹس ہیں نیوی اور ائیر فورس نے نیشنل پارک میں تجاوزات کی ہیں، وائلڈ لائف مینجمنٹ بورڈ نے ان کے خلاف کیا ایکشن لیا۔انہوں نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اگر نیشنل پارک میں کوئی بھی تجاوزات کرے تو اس کے کیا نتائج ہیں؟

انہوں نے کہا کہ مارگلہ ہلز نیشنل پارک تجاوزات پر آپ نے نیوی اور ائیر فورس کو نوٹس کیوں نہیں کیا؟ یہاں کوئی بھی قانون سے بالاتر نہیں ہے۔بے شک یہ عدالت قانون خلاف ورزی کرے آپ ایکشن لیں۔ سماعت کے دوران چیئرپرسن وائلڈ لائف مینجمنٹ بورڈ رائنا سعید خان کا کہنا تھا کہ ہم نے ایکشن نہیں لیا کیوںکہ ہمارے پاس اختیارات نہیں ہیں۔جس پر چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیے کہ اگر میں بھی قانون کی خلاف ورزی کروں تو آپ میرے خلاف بھی ایکشن لیں ، آپ کے کیا اختیارات ہیں ؟ آپ کیا کر سکتے ہیں؟ آپ کو کیوں معلوم نہیں ہے؟ چیف جسٹس کے سوال پر وائلڈ لائف مینجمنٹ بورڈ کے وکیل دانیال حسن نے کہا کہ اسلام آباد وائلڈ لائف آرڈیننس 1979ء کے تحت قید اور جرمانہ کی سزا ہو سکتی ہے، بورڈ کے پاس سیکشن 29 کے تحت گرفتاری کا اختیار بھی موجود ہے۔عدالت نے ریمارکس دیے کہ وائلڈ لائف سے متعلق اتنا موثر قانون موجود ہے آپ نے اس میں صرف ترامیم کرنی ہیں، وائلڈ لائف مینجمنٹ بورڈ اس حوالے سے مناسب ایکشن لے، بورڈ کو جو اختیارات دیے گئے ہیں ان کے تحت ایکشن لیں، کوئی بھی قانون سے بالاتر نہیں ہے۔ چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ کا مزید کہنا تھا کہ یہ بھی رپورٹ ہوا ہے کہ وفاقی حکومت نے بھی ایکشن لیا ہے ، چیئرپرسن صاحبہ آپ کے پاس اختیارات ہیں اگر کوئی بھی قانون کی خلاف ورزی کر رہا ہے تو اس کے خلاف ایکشن لیں۔ جس کے بعد عدالت نے وائلڈ لائف مینجمنٹ بورڈ کو کارروائی کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کیس کی مزید سماعت 27 اگست تک ملتوی کر دی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں