ملزم نے زیادتی کے مقدمے سے رہا ہوتے ہی ایک اور بچے کو زیادتی کا نشانہ بنا دیا

عارف والا(نیوز ڈیسک) ملزم نے زیادتی کے مقدمے سے رہا ہوتے ہی ایک اور بچے کو زیادتی کا نشانہ بنا دیا۔تفصیلات کے مطابق ناقص تفتیش کے باعث زیادتی کیس میں رہائی ہانے والے ملزم نے رہا ہوتے ہی ایک بار پھر بچے کو زیادتی کا نشانہ بنا دیا۔ملزم ذوالفقار ماچھی کو زیادتی کیس میں گرفتار کیا گیا ہے۔یہی نہیں ملزم کے خلاف زیادتی سمیت چار مقدمات درج تھے۔عدالت کی جانب سے ملزم کو دو سال بعد رہائی کا پروانہ ملا۔رہائی پاتے ہی ملزم نے دوسری جماعت کے طالب علم کو اغوا کیا اور زیادتی کا نشانہ بنا دیا۔ڈی پی او پاکپتن ملک جمیل ظفر نے معاملے کا نوٹس لے لیا اور

پولیس کو فوری طور پر بچے کو بازیاب کرانے کا حکم دیا۔ڈی پی او کے حکم پر پولیس حرکت میں آئی اور مبینہ زیادتی کے شکار بچے کو بازیاب کراتے ہوئے ملزم کو ایک بار پھر جیل کی سلاخوں کے پیچھے ڈال دیا۔ملزم کی جانب سے بچے کو اغوا کرنے کی سی سی ٹی وی فوٹیج بھی سامنے آئی ہے۔۔دوسری جانب خیبر پختونخوا کے ضلع کوہاٹ میں نالے سے مردہ حالت میں پائی گئی 4 سالہ بچی سے جنسی زیادتی کی تصدیق ہو گئی۔بچی کی لاش خٹک کالونی کے علاقے میں نالے سے برآمد کی گئی جسے پوسٹ مارٹم کے لیے ڈویڑنل ہیڈ کوارٹرز کے ڈی اے ہسپتال منتقل کردیا گیا تھا۔ڈی پی او کوہاٹ سہیل خالد نے بتایا کہ مقتول بچی کی میڈیکل رپورٹ میں زیادتی کی تصدیق ہوگئی ہے اور اسے زیادتی کے بعد گلا دبا کر قتل کیا گیا۔ انہوں نے بتایا کہ بچی سے زیادتی اور قتل کے کیس میں درجنوں مشتبہ افراد کو حراست میں لیا گیا اور ان کے ڈی این اے نمونے لیبارٹری بھیج دیے گئے ہیں۔انہوںنے کہاکہ میڈیکل رپورٹ میں موت کی وجہ گلا دبانے کی وجہ سے سانس بند ہونے سے بتائی گئی۔دوسری جانب 4 سالہ حریم فاطمہ کی نماز جنازہ آبائی قبرستان بابل خیل میں ادا کردی گئی۔نماز جنازہ میں ڈپٹی کمشنر کرک عبد الغفور شاہ، ڈسٹرکٹ پولیس افسر طارق حبیب سابق رکن قومی اسمبلی شاہ عبد العزیز مجاہد سمیت سیاسی و سماجی رہنماؤں نے شرکت کی اور واقعے کی شدید مزمت کرتے ہوئے قاتلوں کی فوری گرفتاری اور نشان عبرت بنانے کا مطالبہ کیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں