انجمن ہلال احمر اسلام آباد کےجنرل سیکرٹری نےملازمہ کو قتل کردیا

اسلام آباد(نیوز ڈیسک)انجمن ہلال احمر کے جنرل سیکرٹری خالد بن مجیدکے خلاف اسلام آباد پولیس نے لڑکی کے والد کی مدعیت میں قتل کا مقدمہ درج کرلیا ہے۔تفصیلات کے مطابق لڑکی کے والد نے اسلام آباد کے تھانہ آئی نائن میں درخواست دیتے ہوئے موقف اپنایا کہ میری بیٹی ریڈ کریسنٹ اسلام آباد میں ملازمہ تھی اور ریڈ کریسنٹ کے جنرل سیکرٹری خالد بن مجید نے میری بیٹی سے خفیہ نکاح کیا ہوا تھا ۔ میری بیٹی کی تنخواہ 65ہزار روپے تھی،خالد بن مجید تنخواہ میں سے 25ہزار روپے کٹوتی کرکے اپنے پاس رکھتا تھا جو کہ کافی رقم بنتی ہے۔

لڑکی کے والد نے بتایا کہ خالد بن مجید پہلے سے شادی شدہ اور چار بچوں کا باپ ہے اسی لیےوہ میری بیٹی کو شادی اوپن کرنے سے منع کرتا تھا جبکہ وہ شادی کو خفیہ نہیں رکھنا چاہتی تھی اسی بات پردونوں کے درمیان جھگڑا ہوا تھا۔22نومبر کو خالد بن مجید نے میری بیٹی کو زہر دیکر قتل کردیااور بوکھلاہٹ کا شکار ہو کر خود ہی ہمیں اطلاع دی۔لڑکی کے والدکا کہنا تھا کہ میری بیٹی کی نعش اس وقت پمز اسپتال کے مردہ خانے میں موجود ہے۔ملزم نے میری بیٹی کا موبائل فون بھی چھپالیا ہے ، ہمیں انصاف فراہم کیا جائے۔ اسلام آباد پولیس نے لڑکی کے والد کی مدعیت میں قتل کا مقدمہ درج کرکے ملزم کو گرفتار کرلیااور تفتیش شروع کردی گئی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں