چوہدری شجاعت حسین کا خط غیر قانونی ہدایات پر مبنی تھا،ق لیگ نے الیکشن کمیشن کے حکم امتناعی کیخلاف بڑا قدم اٹھا لیا

لاہور (آن لائن)مسلم لیگ(ق) کے رہنما کامل علی آغا نے نئے سربراہ کے انتخابی شیڈول پر الیکشن کمیشن کے حکم امتناعی کے خلاف لاہور ہائیکورٹ میں درخواست دائر کردی۔صفدر شاہین پیرزادہ کے توسط سے دائردرخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ وزیراعلی

کے انتخاب کے موقع پر پارٹی سربراہ شجاعت حسین نے خط ڈپٹی سپیکر کو لکھا۔چوہدری شجاعت حسین کا خط غیر قانونی ہدایات پر مبنی تھا، پارٹی کارکنوں نے اس خط کے خلاف شجاعت حسین کے گھر کے باہر بھر پور احتجاج کیا۔پارٹی کی مرکزی ورکنگ کمیٹی نے اجلاس میں شجاعت حسین کی ہدایات کو غیرجمہوری عمل قرار دیتے ہوے انہیں پارٹی سربراہ کے عہدے سے ہٹا دیا۔مرکزی ورکنگ کمیٹی نے پارٹی کے نئے سربراہ کے انتخاب کے لئے دس اگست کا انتخابی شیڈول جاری کیا،الیکشن کمیشن نے چوہدری شجاعت کی درخواست پر انتخابی عمل روکتے ہوئے حکم امتناعی جاری کردیا۔الیکشن کمیشن نے مرکزی مجلس عاملہ نہ ہونے کے جواز پر غیر قانونی حکم دیا،اگرالیکشن کمیشن کے جواز کو تسلیم کرلیا جائے تو چوہدری شجاعت کیسے پارٹی سربراہ برقرار رہ سکتے ہیں۔ کامل علی آغا نے نئے سربراہ کے انتخابی شیڈول پر الیکشن کمیشن کے حکم امتناعی کے خلاف لاہور ہائیکورٹ میں درخواست دائر کردی۔ درخواست میں استدعا کی گئی ہے کہ الیکشن کمیشن کا انتخابی عمل روکنے کا اقدام غیر قانونی ہے لہٰذاعدالت الیکشن کمیشن کا حکم کالعدم قرار دے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں