دنیا اب ہمیں پیسے بھی نہیں دیتی، وفاقی وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)وفاقی وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے اعتراف کیا ہے کہ دنیا اب ہمیں پیسے بھی نہیں دیتی ہے، بجٹ خسارہ کم کرنے کے لیے قرضہ لینا پڑتا ہے۔روسی فریق کو 390 امریکی ڈالر کی قیمت کی پیشکش کی منظوری دیدی ہے اور قرار دیا ہے کہ اگر وہ پیشکش قبول نہیں کرتے ہیں تو پیشکش منسوخ کی جا سکتی ہے۔

وفاقی وزیر خزانہ و محصولات مفتاح اسماعیل کی زیرصدارت کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی (ای سی سی) کا اجلاس منعقدہوا ۔ اجلاس میں وزارت نیشنل فوڈ سیکیورٹی اینڈ ریسرچ نے روس سے جی ٹو جی کی بنیاد پر پسی ہوئی گندم کی فراہمی کی سمری پیش کی۔ کمیٹی کو بتایا گیا کہ28مئی 2022ء کو وفاقی کابینہ کی ای سی سی کے 3.00 ایم ایم ٹی گندم کی درآمد سے متعلق فیصلے کے مطابق ٹی سی پی نے G2G کی بنیاد پر روسی حکومت سے گندم کی درآمد پرعمل شروع کیا۔ اس تناظر میں، روسی ایس او ای اور ٹی سی پی کے درمیان 8جون 2022ء کومفاہمت کی یادداشت پر دستخط کئے گئے ابتدائی طور پر، روس کی حکومت نے گندم کی قیمت 410ڈالر ۔ایم ٹی پیش کی ۔ درآمدی گندم کی قیمت کے معاملے پر روسی سفارت خانے کے ساتھ بات چیت کے لیے وزیر اعظم کے دفتر خارجہ نے وزیر اعظم کے مشیر برائے امور خارجہ طارق فاطمی کی سربراہی میں ایک کمیٹی تشکیل دی تھی۔ دریں اثنا، روسی وفد نے وزیر تجارت سے ملاقات کی اور گندم کی قیمت میں 405ڈالر۔ایم ٹی تک کمی کی پیشکش کی۔ بعد میں قیمت مزید کم کر کے 400 ڈالر۔ایم ٹی کردی گئی ۔ آخر کار ، وزارت تجارت کی سفارشات پر قومی غذائی تحفظ اور تحقیق کی وزارت نے روس کی حکومت کی ایک سرکاری کمپنی ایم /ایس پروڈنٹورگس کی طرف سے پیش کردہ 399.50ڈالر۔ایم ٹی قیمت پر 120,000 ایم ٹی +5فیصد ایم او ایل ایس او کی فراہمی کیلئے جی ٹو جی بنیادوں پر پسی ہوئی گندم سپلائی کابینہ کی ای سی سی کو غور کے لیے بھجوایا ۔ ای سی سی اجلاس میں قراردیا گیا ہے کہ گندم کی قیمت میں کمی کا رجحان ہے جو آنے والے دنوں میں مزید کم ہو سکتا ہے۔ لہذا یہ فیصلہ کیا گیا کہ روسی فریق کو 390 امریکی ڈالر کی قیمت کی پیشکش کی جا سکتی ہے

متعلقہ آرٹیکلز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button