جے یو آئی کے دو ارکان اسمبلی کی گرفتاری، اسلام آباد پولیس کا مؤقف سامنے آگیا

اسلام آباد (نیوز ڈیسک)اسلام آباد پولیس کا کہنا ہے کہ انہوں نے جمعیت علمائے اسلام (جے یو آئی) ارکان قومی اسمبلی صلاح الدین ایوبی اور جمال الدین کو گرفتار نہیں کیا بلکہ وہ اپنی مرضی سے تھانے میں بیٹھے ہیں۔ترجمان اسلام آباد پولیس کا کہنا ہے کہ صلاح الدین ایوبی اور جمال الدین تھانہ آبپارہ میں ایس ایچ او کےکمرے میں موجود ہیں اور دونوں ارکان قومی اسمبلی تھانے سے نہ جانے پر بضد ہیں۔ترجمان پولیس کے مطابق دونوں ارکان قومی اسمبلی گرفتار پارٹی کارکنوں کی رہائی پر اصرار کر رہے ہیں۔علاوہ ازیں جمعیت علمائےاسلام کےکارکن تھانہ آبپارہ کے باہر بھی جمع ہوگئے ہیں جبکہ تھانہ آبپارہ کے

باہر دونوں اطراف کی سڑکیں بلاک ہو گئی ہیں۔ جے یو آئی کے محافظ دستے ‘انصار الاسلام‘ کے کارکن بھی تھانے کے باہر موجود ہیں۔اس سے قبل وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید نے اپوزیشن کو خبردار کیا ہے کہ اگر قانون کو ہاتھ میں لیا تو قانون آپ کو ہاتھ میں لے گا، جمعیت علمائے اسلام (ف) کے رہنما صلاح الدین ایوبی کو گرفتار نہیں کیا، پرائیوٹ ملیشیا کے 19 افراد کو گرفتار کیا ہے۔اسلام آباد میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے شیخ رشید نےجے یو آئی (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کو مخاطب کرکے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان کے خلاف تحریک عدم اعتماد کے لیے آپ کو پوری سہولت دینا چاہتے ہیں، آپ حکم کریں، لیکن اگر قانون کو ہاتھ میں لیا تو کوئی لحاظ نہیں ہوگا۔انہوں نے کہا کہ اگر اراکین اسمبلی کو کوئی مسئلہ ہے تو اس کے لیے میں حاضر ہوں، صلاح الدین کمپنی کی مشہوری کے لیے تھانے میں بیٹھے ہیں۔وفاقی وزیر داخلہ نے کہا کہ مسئلہ انصار الاسلام آئین کے آرٹیکل 256 کے تحت تحلیل کی گئی، مسئلہ انصار الاسلام کا ہے لیکن دیگر پارٹیاں کود پڑیں۔ انہوں نے کہا کہ گھیراؤ کی باتیں کرنے والے سن لیں جو بھی تشدد کرے گا اس کو کچل دیں گے۔شیخ رشید نے کہا کہ اگر ملک میں کسی کی جان کو خطرہ ہے تو وہ مولانا فضل الرحمان اور میں ہوں، آصف علی زرداری یا شہباز شریف نہیں۔

متعلقہ آرٹیکلز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button