اسلام آباد پولیس کی پارلیمنٹ لاجز میں انصار الاسلام کے کارکنان کی پکڑ دھکڑ، فضل الرحمان بھی پہنچ گئے

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کی پولیس نے پارلیمنٹ لاجز میں آپریشن شروع کردیا ہے۔ اسلام آباد پولیس نے انصارالاسلام اور جے یو آئی (ف) کے کارکنان کو گرفتارکرلیا ہے۔سیاسی جماعتوں کے اتحاد پی ڈی ایم کے سربراہ مولانا فضل الرحمان اور جے یو آئی کے مرکزی رہنما سینیٹر عبدالغفور حیدری بھی آپریشن شروع کیےجانے کی اطلاع پرپارلیمنٹ لاجز پہنچ گئے ہیں۔میڈیا رپورٹ کےمطابق پی ڈی ایم کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے اس موقع پر اپنی گرفتاری دینے کا بھی اعلان کیا ہے۔انصارالاسلام کے کارکنان اور جے یو آئی (ف) کے کارکنان کو پولیس کی جانب سے حراست میں لیے جانے کی اطلاع پر صوبہ خیبرپختونخوا میں قائد حزب اختلاف اکرم خان درانی بھی پارلیمنٹ لاجز پہنچ گئے ہیں۔سابق صدر پاکستان آصف زرداری نے

پارلیمنٹ لاجز میں پولیس کارروائی کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ کٹھ پتلی وزیر اعظم اراکین پارلیمنٹ کوہراساں کررہے ہیں۔انہوں ںے کہا کہ صرف جے یو آئی کے ممبران کو نہیں بلکہ تمام اسمبلی ممبران کو ڈرانے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پولیس آفیسرز اور انتظامیہ کٹھ پتلی کے غیر قانونی حکم پر عمل نہ کریں۔ہم نیوز کے مطابق آصف زرداری نے کہا کہ اراکین اسمبلی حوصلے بلند رکھیں، حکومت آخری ہچکیاں لے رہی ہے۔پاکستان مسلم لیگ (ن) کی مرکزی نائب صدر مریم نواز نے پولیس کارروائی پر کہا ہے کہ اسلام آباد پولیس عمران خان اوراس کی گرتی حکومت کا آلہ کار بننے سے گریز کرے۔سابق وزیراعظم میاں نواز شریف کی صاحبزادی مریم نواز نے کہا کہ اس قسم کی پاگل پن پر مبنی کارروائیوں کا الزام اپنے سر لینا مناسب نہیں ہے۔

متعلقہ آرٹیکلز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button