دبئی میں روزگار کے خواہشمند پاکستانیوں کیلئے خوشخبری،بے شمار نوکریوں پر بھرتیاں شروع ہوگئیں

دبئی (نیوز ڈیسک) متحدہ عرب امارات میں روزگار ڈھونڈنے والے پاکستانیوں کیلئے خوشخبری ہے کہ یو اے ای میں بہت سے نئے اسکولوں کی آمد سے اساتذہ کے لیے بھرتیاں شروع کردی گئیں ، دبئی میں گزشتہ تین سالوں میں 21 اسکول کھل چکے ہیں اور ملک بھر میں نجی اور سرکاری اداروں کے لیے بے شمار نوکریوں کی تشہیر کی جا رہی ہے ، جہاں آجر جدید تدریسی انداز سے واقف اساتذہ کی خدمات حاصل کرنا چاہتے ہیں۔خلیج ٹائمز کے مطابق اساتذہ کی خدمات حاصل کرنے اور متعلقہ کرداروں کے لیے اشتہارات اور حوالہ جات کا روایتی طریقہ اب بھی زیادہ تر تعلیمی اداروں میں عام ہے لیکن

چیلنج اس جگہ کو اساتذہ کے ساتھ بھرنا ہے ، پلم جابز کی سی ای او دیپا سد کہتی ہیں کہ بہت سے عارضی اور بیرون ملک مقیم درخواست دہندگان دستیاب ہونے کے ساتھ امیدواروں کی کوئی کمی نہیں ہے لیکن چیلنج یہ ہے کہ صحیح امیدوار کی خدمات حاصل کی جائیں ، اعلیٰ معیار کے UAE کے تجربہ کار اساتذہ اور کیریئر کی ترقی کے مواقع کی کمی کے ساتھ ہم اپنے تعلیمی کلائنٹس کے ساتھ زیادہ فعال ٹیلنٹ مینجمنٹ حکمت عملی اپنانے کے لیے کام کر رہے ہیں ، وقت کی ضرورت جدید تدریسی اسلوب کے حامل اساتذہ ہیں جو طلباء کو سیکھنے کے لیے زیادہ ہائبرڈ انداز اپنانے کے قابل بنا سکتے ہیں اور اس کے لیے مزید باہمی مہارتوں کی ضرورت ہوتی ہے جو کہ صرف مواد کی فراہمی سے بہت مختلف ہیں۔مارک ایلس کے ڈائریکٹر اوس اسماعیل کہتے ہیں کہ ہم نے دیکھا ہے سب سے زیادہ مطلوب مہارتوں میں سے ایک طالب علم کو سیکھنے میں مشغول کرنے کی صلاحیت تھی ، خاص طور پر کووڈ کے بعد کی کلاس اور آن لائن سیکھنے کے ساتھ اساتذہ کو اپنی تعلیم کو ڈھالنے کے قابل ہونے کی ضرورت ہے ، بہت سارے اسکولوں اور یونیورسٹیوں نے اچھے ٹیکنالوجی کے علم اور تجربے کے حامل اساتذہ کی درخواست کی ہے ، اس لیے اساتذہ کو اپنی تعلیم کے اندر ٹیکنالوجی کا استعمال کرنے کے قابل ہونا چاہیے اور اس لیے یہ ایک انتہائی اہم ہنر بن گیا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ 2022 میں بھرتی کے لیے مختلف شعبوں میں اساتذہ کی مانگ ہونے والی ہے خاص طور پر متحدہ عرب امارات کے لیے کلیدی توجہ والے شعبوں میں ،

جن میں ٹیکنالوجی، مصنوعی ذہانت، بایومیڈیکل/سائنس وغیرہ شامل ہیں تاہم مسابقت ان اساتذہ کی تعداد کو مدنظر رکھتے ہوئے بہت زیادہ ہوگی جو ملک کی جانب سے پیش کیے جانے والے فوائد اور طرز زندگی کی بنیاد پر متحدہ عرب امارات میں منتقل ہونے کے خواہاں ہیں۔ایمٹی سکول دبئی کی پرنسپل سنگیتا چیمہ نے کہا کہ متحدہ عرب امارات میں تعلیم پختہ ہو چکی ہے اور یہ ہمیشہ کی طرح متحرک ہے ، طلباء کو کم عمری میں ہی نمائش حاصل ہوتی ہے اور انہیں متعدد مواقع تک رسائی حاصل ہوتی ہے جو انہیں ہوشیار اور بالغ افراد میں ڈھال دیتے ہیں ، ہم ان خاندانوں کی تعداد میں اضافہ دیکھ رہے

ہیں جو متحدہ عرب امارات میں گھر بنانے کا انتخاب کرتے ہیں ، اسکولوں میں زیادہ طلباء کے داخلے کے ساتھ تدریسی اور تعلیمی عملے کی ضرورت یقینی طور پر بڑھ گئی ہے لیکن وقت کے ساتھ ساتھ تدریسی امیدواروں کے لیے بھرتیاں زیادہ مضبوط ہو گئی ہیں ، جہاں ملازمین آزمائے ہوئے اور حقیقی مہارتوں کو دیکھتے ہیں۔اسکول امپروومنٹ پارٹنر ، انٹرنیشنل اسکولز پارٹنرشپ (ISP) ابیگیل فشبورن نے کہا کہ ہم دنیا بھر سے بہترین اساتذہ کی تقرری کے لیے مل کر کام کرتے ہیں ، ہمارا وسیع بھرتی کا عمل جو ویب صفحات، ایجنسیوں اور عالمی سطح پر استعمال کرتا ہے، اس بات کو یقینی بناتا ہے کہ

ہمارے پاس شاندار پریکٹس، تجربے کی وسعت اور بین الاقوامی تعلیم کے ساتھ اساتذہ کا ایک بڑا ٹیلنٹ پول ہے ، ایک سخت انتخابی عمل کے حصے کے طور پر ہم آمنے سامنے اور ورچوئل انٹرویوز اور پریزنٹیشنز کا انعقاد کرتے ہیں اور یقیناً ہماری تمام تقرری ایک تفصیلی حوالہ اور حفاظت کے عمل سے گزرتی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں