آڈیو پر کام گذشتہ 6 ماہ سے ہو رہا تھا،ثاقب نثار کی مبینہ آڈیو سامنے لانے کی وجہ بتادی گئی

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) سینئرصحافی عارف حمید بھٹی کا کہنا ہے کہ ویڈیو لیک کروانے والوں کی بھی خوفناک ویڈیوز موجود ہیں۔انہوں نے جی این این کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ نام نہیں لوں گا لیکن کچھ لوگوں کی خطرناک ویڈیوز اور آڈیوز موجود ہیں۔جب رانا شمیم لندن میں تھے تو وہاں بھی اُس ویڈیو کو دیکھا گیا۔ویڈیو کا گندا کھیل شروع ہو چکا ہے جس کا انجام بہت خوفناک ہو گا۔ویڈیو لانے والوں کی جو ویڈیوز ہیں وہ تو ٹی وی پر دکھانے والی بھی نہیں۔آنے والے وقت میں ایک ایک چیز باہر آئے گی۔عارف حمید بھٹی نے مزید کہا کہ ن لیگ چاہتی ہے کہ ویڈیو لیک کا معاملہ عدالت میں جائے اور معاملہ بڑھے۔

ثاقب نثار کی ویڈیو پر کام گذشتہ 6 ماہ سے ہو رہا تھا۔کیونکہ ان کا خیال تھا کہ جیسے ہی مریم نواز اور کیپٹن (ر) سے متعلق کیس کی سماعت شروع ہو گی تو تب یہ معاملہ سامنے لایا جائے گا، جج پیچھے ہٹ جائیں گے اور ہم من پسند فیصلہ لے لیں گے۔لیکن ہوا یہ کہ آڈیو جعلی ثابت ہو گئی کیونکہ مختلف تقاریر سے حصوں کو جوڑ کر کلپ تیار کیا گیا۔آڈیو لانے کا مقصد تھا کہ سابق چیف جسٹس جذباتی ہو کر عدالتوں میں جائیں اور نوازشریف پر بننے والے کیس پیچھے ہو جائیں اور یہ کیس آگے آ جائے۔پروگرام میں موجود صحافی سعید قاضی نے کہا کہ ایسی ویڈیوز لانے کا مقصد یہ ہے کہ ان کا کیس منطقی انجام تک نہ پہنچے۔واضح رہے کہ چیف جسٹس (ر) ثاقب نثار سے منسوب ایک آڈیو کلپ سامنے آئی جس میں وہ مبینہ طور پر کہہ رہے ہیں کہ عمران خان کی جگہ بنانے کے لیے نواز شریف کو سزا دینی ہوگی۔ مبینہ آڈیو ٹیپ سوشل میڈیا پر تیزی سے وائرل ہوئی جس میں مبینہ طور پر چیف جسٹس (ر) ثاقب نثار نے کہا کہ عمران خان کی جگہ بنانے کیلئے نواز شریف کو سزا دینی ہو گی، مریم نواز کو بھی سزا دینی ہو گی۔مبینہ آڈیو کلپ میں وہ مبینہ طور پر تسلیم کر رہے ہیں کہ مریم نواز کو بھی سزا دینی ہو گی اگرچہ مریم نواز کے خلاف کوئی کیس نہیں ہے۔ جس کے بعد سوشل میڈیا پروائرل ہونے والی مبینہ آڈیو کلپ کو ن لیگ کے رہنماؤں نے اپنی جیت اورعدل کے لیے امتحان قرار دیا ہے۔ جبکہ سابق چیف جسٹس ثاقب نثار نے خود سے منسوب مبینہ آڈیو کو جعلی قرار دے دیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں