ڈی جی آئی ایس آئی کی تعیناتی، ہو سکتا ہے تقرری میں وزیراعظم کا مذہبی یقین شامل ہو، پی ٹی آئی رہنما

لاہور(نیوز ڈیسک)پاکستان تحریک انصاف کے رہنما صداقت علی عباسی کا کہنا ہے کہ ڈی جی آئی ایس آئی کے معاملے پر وزیراعظم کا مذہبی یقین شامل ہو سکتا ہے۔تفصیلات کے مطابق پی ٹی آئی رہنما صداقت علی عباسی نے نائب صدر ن لیگ مریم نواز پر تنقید کی اور کہا کہ وہ سیاست میں مذہب کو لاتی ہیں، استخاروں اور جادو ٹونے کی بات کرتی ہیں۔جس پر اینکر کامران شاہد نے کہا کہ جادو ٹونے کا تو مذہب سے کوئی تعلق نہیں۔انہوں نے سوال کیا کہ کیا ڈی جی آئی ایس آئی کی تعیناتی یا دیگر فیصلوں میں بھی کوئی مذہبی پہلو یا استخارہ شامل ہے؟ اپوزیشن تو آپ کے بارے میں اسی طرح کی رائے رکھتی ہے۔

جس کے جواب میں صداقت عباسی نے کہا کہ ہو سکتا ہے وزیراعظم کا اس بات پر کوئی مذہبی بیلیف شامل ہو لیکن ہم سجھتے ہیں کہ ایسی چیزوں کا فائدہ ملک دشمنوں کو ہوتا ہے۔سب کو ادب کے دائرے میں رہ کر بات کرنی چاہئیے۔قومی سطح کے فیصلوں کو غیر سنجیدہ گفتگو میں اڑا دینا قابل مذمت ہے۔مزید کیا کہا ویڈیو میں ملاحظہ کیجئے:۔خیال رہے کہ پاکستان مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے ایک بار پھر وزیراعظم پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا تھا کہ وزیراعظم کی کرسی پر قابض عمران کان جادو ٹونے سے 22 کروڑ عوام کا ملک چلا رہے ہیں،عمران خان آئینی وزیراعظم نہیں ہیں، جب ملک کی اہم تقرریاں جادوٹونے اور جنات کرتے ہوں تو پھر اس ملک کیاداروں کا تماشا ہی بنے گا،اتنا ہی جادو ٹونا کامیاب ہے تو عوام کی بھلائی کیلئے استعمال کیوں نہیں کرتی ،جنتر منتر اتنا کامیاب ہے تو پیٹرول، ڈیزل، آٹا، سستا کریں، جب آپ جنات کے ذریعے یہ سب کریں تو یہ ہی ہو گا، جنات کچھ اور کہہ رہے ہیں اور آپ کا حساب کچھ اور، ایسے لوگوں پر ہنسی آتی ہے، اگریہی طریقہ رہا تو ملک کا اللہ ہی حافظ ہے، عمران کو ووٹ کی عزت یاد آگئی، وہ نواز شریف بننے کی کوشش نہ کریں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں