آئی ایم ایف کا ایک اور مطالبہ، بجلی کی قیمت میں اضافے کیلئے تیار ہوجائیں ، پاکستانیوں کیلئے بُری خبر آگئی

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) بین الاقوامی مالیاتی ادارے آئی ایم ایف نے ایک اور مطالبہ کردیا جس کی وجہ سے ملک میں بجلی کی قیمت اور ٹیکس مزید بڑھنے کا امکان پیدا ہوگیا۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق آئی ایم ایف کی جانب سے پاکستان سے بجلی کی قیمت، انکم و سیلز ٹیکس اور ریگولیٹری ڈیوٹیز بڑھانے کا مطالبہ کیا گیا ہے ، اس ضمن میں آئی ایم ایف نے پاکستان سے کہا ہے کہ انکم ٹیکس ، سیلز ٹیکس اور ریگولیٹری ڈیوٹی کے حوالے سے مزید ٹیکس اقدامات کیے جائیں تاکہ سالانہ محصولات کا ہدف 58 کھرب روپے سے بڑھ کر 63 کھرب روپے ہوجائے ، اسی طرح آئی ایم ایف نے یہ تجویز بھی دی

ہے کہ بجلی ٹیرف کی بنیادی قیمت میں 1.40 روپے فی یونٹ اضافہ کیا جائے تاکہ بڑے گردشی قرضے کو قابو کیا جاسکے۔یہاں قابل ذکر بات یہ ہے کہ ابھی دو روز قبل ہی نیپرا نے بجلی ایک روپیہ 65 پیسے فی یونٹ مہنگی کی ہے ، نیپرا نے اس حوالے سے اعلامیہ بھی جاری کر دیا ہے ، نیپرا اعلامیہ کے مطابق بجلی کی قیمتوں میں اضافہ کر دیا ہے۔ بجلی ایک روپیہ 65 پیسے فی یونٹ مہنگی کر دی گئی ہے ، بجلی کی قیمتوں میں اضافہ سہ ماہی فیول ایڈجسمنٹ کی مد میں کیا گیا ، قیمتوں میں اضافے کا اطلاق 300 سے زائد یونٹ والے صارفین پر ہو گا۔اس سے قبل 10 ستمبر 2021ءکو نیشنل الیکٹرک پاور ریگولیٹری اتھارٹی نے بجلی کی قیمت میں ایک روپے 38 پیسے فی یونٹ اضافے کی منظوری دی تھی ، نیپرا نے جولائی کے ماہانہ فیول ایڈجسمنٹ چارجز کی مد میں بجلی کی قیمتوں میں ایک روپے 38 پیسے فی یونٹ اضافے کی منظوری دی جس کا اطلاق ستمبر کے مہینے کے بلوں پر ہو گا،نیپرا کے جاری کیے گئے نوٹیفیکیشن کے مطابق سی پی پی اے جی نے ایک روپے 47 پیسے فی یونٹ اضافے کی درخواست کی تھی، اتھارٹی نے یکم ستمبر 2021 کو ایف سی اے پر عوامی سماعت کی تھی جس کی روشنی میں قیمت بڑھانے کا فیصلہ کیا گیا۔یاد رہے کہ حکومت نے دو روز قبل بجلی و گیس صارفین پر 17 فیصد تک اضافی ٹیکس بھی عائد کیا تھا۔ فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) نے نان فائلرز صنعتی و کمرشل گیس و بجلی صارفین پر 17 فیصد تک اضافی ٹیکس عائد کرنے کا نوٹی فکیشن جاری کیا ،
نوٹی فکیشن کے مطابق نان فائلر کمرشل صارفین کے بلوں پر 5 سے17فیصداضافی ٹیکس عائد کیا جائے گا جبکہ ماہانہ 10ہزار روپے تک کے کمرشل صارفین کے بل پر 5 فیصد، ماہانہ 10 سے 20 ہزار روپے کے بل پر7 فیصداضافی ٹیکس اور بیس سے 30 ہزار روپے کے بل پر 10 فیصد اضافی ٹیکس عائد کیا جائےگا ، نوٹی فکیشن کے مطابق ماہانہ 30 سے 40 ہزار روپے کے بل پر 12 فیصد اضافی ٹیکس جبکہ ماہانہ 40 سے 50 ہزار روپے بل پر 15 فیصد اور ماہانہ 50 ہزار روپے سے زیادہ کے بل پر17فیصد اضافی ٹیکس عائد ہوگا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں