اسرائیل سے امن معاہدہ مسئلہ فلسطین کی قیمت پر نہیں کیا گیا، متحدہ عرب امارات

دبئی (مانیٹرنگ ڈیسک) متحدہ عرب امارات(یو اے ای)کے ولی عہد محمد بن زید النہیان نے کہا ہے کہ متحدہ عرب امارات اب بھی فلسطینی ریاست کے قیام کیلئے پرعزم ہے اور اسرائیل سے امن معاہدہ اس کی قیمت پر نہیں کیا گیا۔تل ابیب سے پہلی کمرشل فلائٹ ابوظہی پہنچنے کے بعد اپنے بیان میں ولی عہد نے کہا کہ متحدہ عرب امارات آج بھی آزاد اور خود مختار فلسطینی ریاست کے مطالبے پر قائم ہے۔معاہدے کے بعد اتوار کو دونوں ملکوں کے درمیان باقاعدہ فضائی سروس کا آغاز ہوا اور پہلی فلائٹ اسرائیل کی قومی ایئرلائن العالتل ابیب سے ابوظہبی پہنچی۔امارات اور اسرائیل کے درمیان پہلی کمرشل پرواز کے

ذریعے امریکا اور اسرائیل کی اہم شخصیات امارات پہنچی تھیں۔میڈیا رپورٹ کے مطابق امارات کے ولی عہد الشیخ محمد بن زید ال نہیان نے کہا کہ ان کے فیصلے کا مقصد امن کے لیے مواقع پیدا کرنا ہے۔انہوں نے کہا کہ امن ایک اسٹریٹیجک آپشن ہے، اسرائیل کے ساتھ امن معاہدہ مسئلہ فلسطین کی قیمت پر نہیں کیا گیا اور متحدہ عرب امارات آج بھی آزاد اور خود مختار فلسطینی مملکت کے قیام کے مطالبے پر قائم ہے۔انہوں نے امارات میںموجود فلسطینی تارکین وطن کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ امارات فلسطینیوں کا دوسرا وطن ہے اور ابوظہبی مشرقی بیت المقدس پر مشتمل آزاد فلسطینی ریاست کے مطالبے پر قائم ہے۔ادھر متحدہ عرب امارات کی وزیر خارجہ برائے اسٹریٹیجک کمیونیکیشن ہند العتیبہ نے کہا کہ اسرائیل کے ساتھ امن معاہدے کے بعد متحدہ عرب امارات خطے کے ساتھ زیادہ مربوط ہوگیا ہے، یہ امن ایک امید اور خوشنما تبدیلی کا مظہر ہے اور اس سے ہم خود کو خطے سے زیادہ مربوط محسوس کررہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہم یہاں متحدہ عرب امارات میں یہ محسوس کررہے ہیں کہ ہم آگے بڑھ رہے ہیں اور یہاں از خود تبدیلی کا آنے کا انتظار کرنے کے بجائے اپنی شرائط پر تبدیلیاں لارہے ہیں۔ہند العتیبہ کے مطابق اس معاہدے سے تحدہ عرب امارات کے لیے امکانات کے نئے در وا ہوئے ہیں، میرے خیال میں تعلقات فطری انداز میں آگے بڑھیں گے جس کے لیے اسرائیل اور متحدہ عرب امارات تیار ہیں۔وزارت خارجہ کی عہدیدار نے کہا کہ دونوں ممالک توانا اور فعال ہیں، مستقبل پر نظر رکھنے اور آگے بڑھنے والے ہیں اور مختلف

شعبوں میں مثبت تبدیلیاں لانے کو تیار ہیں۔اس سے قبل ایران کے سپریم لیڈر آیت اللہ خامنائی نے کہا کہ متحدہ عرب امارات نے اسرائیل کو تسلیم کر کے اسلامی دنیا اور فلسطینیوں سے غداری کا ارتکاب کیا ہے۔انہوں نے منگل کو تقریر میں کہا کہ متحدہ عرب امارات کی غداری یقینی طور پر زیادہ عرصے تک نہیں رہے گی لیکن اس شرم ناک اقدام کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا۔ایرانی رہنما نے الزام عائد کیا کہ اماراتی حکام نے صہیونی نظام کو خطے میں داخل ہونے کی اجازت دیتے ہوئیر فلسطینیوں کو فراموش کردیا ہے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.