وفاقی حکومت نے براڈشیٹ کمیشن رپورٹ پبلک کردی ،عظمت سعید کا معنی خیز نوٹ

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) وفاقی حکومت نے براڈشیٹ کمیشن رپورٹ پبلک کردی ہے اور رپورٹ سامنے آگئی ہے۔ تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت ہونے والے وفاقی کابینہ کے اجلاس میں براڈشیٹ کمیشن رپورٹ پبلک کرنے کی منظوری دی گئی تھی، جس کے بعد وفاقی حکومت نے براڈشیٹ کمیشن رپورٹ پبلک کردی ہے اور رپورٹ سامنے آگئی ہے، جس نے بیوروکریسی کے عدم تعاون کی قلعی کھول دی۔رپورٹ میں کہا ہے کہ مختلف اداروں اور منسٹریز کے عدم تعاون سے موہن داس گاندھی خوش ہوئے ہوں گے ، بیوروکریسی کی جانب سے کوشش کی گئی حقائق

چھپائے جائیں اور ریکارڈگما دیا جائے، بیورو کریسی نے یہ اقدامات اپنی اور سیاستدانوں کی کرپشن چھپانے کے لئے کئے۔کمیشن رپورٹ میں کہا گیا کہ ریکارڈ نا صرف اسلام آباد بلکہ پاکستانی ہائی کمیشن لندن میں بھی غائب پایا گیا اور ریکارڈ کا ایک حصہ نیب سےہونیوالی خط وکتابت سے موصول ہوا۔رپورٹ کے مطابق کمیشن نے 26 گواہوں کو بلاکران کے بیانات ریکارڈ کئے رپورٹ گواہوں کے بیانات اورمیسر کردہ ریکارڈ پر مشتمل ہے، طارق فواد ملک کا بیان ریکارڈ کیا گیا اور سوالات پوچھے گئے، طارق فواد ملک مفرور ملزم ہے اور انٹرپول نے ریڈ وارنٹ جاری کر رکھے ہیں۔براڈشیٹ کمیشن رپورٹ میں کہا گیا کاوے موسوی سزا یافتہ شخص ہے، اس نے میڈیا پر چند لوگوں کیخلاف بیان دیے جوسچ ہوسکتے ہیں اور نہیں بھی اور بعض شخصیات پرالزامات لگائے، اگرحکومت چاہے توان الزامات کی مزید تحقیقات کی جاسکتی ہے۔اس حوالے سے عظمت سعید نے کہا رپورٹ کےکچھ حصے میں نے مارگلہ پہاڑی کے دامن میں رہتے ہوئے بنائے، رپورٹ بناتے ہوئے مسلسل گیدڑوں کی آوازیں کانوں میں آتی رہیں، لیکن گیدڑوں کی آوازیں میرے کام میں رکاوٹ نہیں بنیں۔براڈشیٹ کمیشن کے سربراہ کا کہنا تھا کہ کرپشن کی حمایت کرنیوالےہر جگہ موجود ہیں، سوچتاہوں کیایہ رجحان پہلے سے چلا آرہا ہے اور حیران ہوں کہ یہ رجحان قبائلی دورکاہےیااخلاقی دیوالیہ ہے، یا ایسے لوگ ٹکڑوں کے لئے اپنے منہ پھاڑتے اور دم ہلائے کھڑے رہتے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں