مولانا شیرانی کے فضل الرحمن سے متعلق بیانات،جے یو آئی کا سخت ردعمل سامنے آگیا

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سینئر رہنما مولانا عطا الرحمٰن نے کہا ہے کہ مولانا شیرانی کی اپنی ایک رائے ہے لیکن انکا جو موقف سامنے آیا ہے وہ جمعیت علمائے اسلام کا موقف نہیں ہے،جے یو آئی کا ہر ایک کارکن مولانا فضل الرحمٰن کی پشت پر کھڑا ہے۔ ایک انٹرویو میں ان کا کہنا تھا کہ مجھے مولانا شیرانی کے بیانات پر حیرت نہیں ہے ،میں شیرانی صاحب کے متعلق کوئی ایسی بات نہیں کہونگا لیکن لگتا یہی ہے کہ انکے رابطے ’بڑے مضبوط‘ ہیں اور یہ بیانات ان ہی رابطوں کا نتیجہ ہیں تاہم میں یہ نہیں کہونگا کہ ان سے بیانات دلوائے گئے ہیں۔

ایک سوال کے جواب میں انکا کہنا تھا کہ جماعت کے اندر ادارے موجود ہیں اور انہیں چاہئے تھا کہ وہ ان اداروں میں آکر بات کرتے اور ان کی بات زیادہ بہتر طور پر سنی جاتی، اس طرح میڈیا پر آکر باتیں کرنا شیرانی صاحب کے ذہن کی عکاسی نہیں کررہا بلکہ کسی اور چیز کی عکاسی کررہا ہے۔واضح رہے کہ اسلامی نظریاتی کونسل کے سابق چیئرمین اور جمعیت علما اسلام کے سینئر رہنما مولانا محمد خان شیرانی کا کہنا تھا کہ مولانا فضل الرحمان نے2019 میں دھرنا دیا اور جماعت کی مجلس شوریٰ سے اس کی منظوری اب لی۔ ’پی ڈی ایم کی تحریک کا کوئی نتیجہ اور نہ کوئی سودے کا ماحول نظر آرہا ہے۔‘جمعیت علمااسلام سے تعلق رکھنے والے سابق پارلیمنٹرین کا کہنا تھا کہ جو جماعتیں عمران خان کو سلیکٹڈ کہتی ہیں وہ خود اپنے گریبان میں جھانک کر دیکھیں وہ سلیکٹڈ ہیں یا منتخب ہیں؟’پی ڈی ایم کی جو مخاصمت ہے یہ مخاصمت برائے عداوت نہیں بلکہ مخاصمت برائے مفاہمت ہے کہ ہمیں بھی کوئی حصہ ملے۔‘مولانا محمد خان شیرانی کا کہنا تھا کہ میں نے آزادی مارچ کے دھرنے کے بارے میں بھی اسی وقت کہا تھا کہ جس طرح گئے ہیں اسی طرح آئیں گے۔ اس پی ڈی ایم کے بارے میں بھی میں نے کہا کہ مجھے کوئی نتیجہ نظر نہیں آتا اور سودے کا بھی بظاہر کوئی ماحول نظر نہیں آتا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں